مانا کہ تم لفظوں کے بادشاہ ہو
ہم بھی خاموشیوں پہ راج کرتے ہیں

ستارے بانٹتا پھرتا ہوں محسن
مگر گھر میں اندھیرا رہ گیا ہے

میں نے جینا سیکھ لیا ہے۔۔
اب میں سچے لہجے میں۔۔
جھوٹی باتیں کرتا ہوں۔۔

ظلمت شب سے شکایت انھیں کیسی محسن
وہ تو سورج کو تھے آئینہ دکھانے والے۔۔۔۔

بہت بے چین رہتی ہے طبیعت اب میری محسن
مجھے اب قتل ہونا ہے،مگر قاتل نہیں ملتا

عشق نے تو سرسری دیکھا
مگر
پڑھ رہا ہے ہجر تفصیلاً مجھے

لکھنے والے نے کیا خوب لکھا ہے
دوست
کے زندگی جب مایوس ہوتی ہے
زندگی تب ہی محسوس ہوتی ہے