تیراوجود رواجوں کے اعتکاف میں ہے
میرا یقین تیرے ع'ش'ق میں ہے....

اس نے جب پلکوں کو جنبش دی عدم
رایگاں سب گفتگو کے فن گۂے

لوگ بھولتے بھی ہیں تو یاد کرواتے رہتے ہیں ، کہ کہیں بھول نہ جائیں

ذرا اب سوچ کہ کہنا جو بھی تم نے کہنا ہے
آواز خواہ ہوا کی ہو
خاموشی ٹوٹ جاتی ہے

Qadmon mein thi zameen, safar faaslon mein tha
Wo tha meray Qareeb magar raston mein tha
Milna tha ittefaq bicharrna naseeb tha
Wo itna hi door ho geya jitna Qareeb tha
Ussay dekhnay ko tarsti reh gai meri Aankhein
Jis k haathon ki lakeeron pay mera naseeb tha

پلکیں کب تک رکوع میں رکھو گے؟
حسن کا واسطہ_______قیام کرو

خاموشی کا ، ادب کیا کرو
یہ آوازوں کی مُرشد ہے_